فوری رابط: ۱۹۵۱-۲۵۵۳۶۶۹۱
Mainbanner

مرکزی امام باڑہ بڈگام

سال1857ء میں سرکار آیت اللہ العظمیٰ آغا سید مہدی موسوی الصفویؒ نے بڈگام میں ایک مسجد اور ایک عالیشان امام باڑہ تعمیر کیا۔چند سال کے بعد جب مجالس میں لوگ زیادہ آنے لگے تو ان کیلئے امام باڑہ میں جگہ کافی نہیں پائی گئی۔جگہ کی کمی کی وجہ سے لوگوں کو تکلیف ہوتی تھی۔اس لئے آپ کے فرزند ارجمند مرحوم حجۃ الاسلام آغا سید احمد موسوی الصفوی نے اس کو از سر نو وسیع پیمانے پر تعمیر کیا لیکن وقت کے ساتھ یہ بھی لوگوں کیلئے کافی نہ پائی گئی۔آپ کے برادر حجۃ الاسلام آغا سید یوسف الموسوی الصفوی نے اس کو پھر سے وسعت دی۔عمارت مکمل ہوگئی ۔یہ امام باڑہ ریاست جموں وکشمیر میں سب سے بڑا امام باڑہ ہے

۔الحاج آغا سید یوسف الموسوی الصفوی نے مسجد کو امام باڑہ کے ساتھ ہی تعمیر کیا ۔ہر جمعہ اور عیدین کو یہاں خانوادہ موسوی کے علماء وعظ تبلیغ فرماتے ہیں اور نماز جماعت ادا کی جاتی ہیں۔سرینگر اور دیگر ملحقہ گاؤں سے بھی شیعہ مسلمان نماز پڑھنے کیلئے یہاں جاتے ہیں ۔آغا سید یوسف الموسوی الصفوی کی وفات کے بعد مرحوم آغا سید احمد الموسوی الصفوی کے فرزند حجتہ الاسلام آغا سید مصطفی الموسوی الصفوی نے امام باڑہ کی مرمت و دیکھ ریکھ کیلئے کئی اقدامات اٹھائے۔اس کا انتظام جموں کشمیر انجمن شرعی شعیان کے ہاتھ میں ہے جس کا صدر حجۃ الاسلام آغا سید حسن الموسوی الصفوی ہیں۔سال بھر اس امام باڑہ میں کئی مجالس عزاء کا اہتمام کیا جاتا ہے جس میں لاکھوں کی تعداد میں عقیدتمند شرکت کرتے ہیں۔یوم عاشورا کو بڈگام کا مرکزی جلوس امام باڑہ بڈگام میں اختتام پذیر ہوتا ہے۔مسجد کی دیکھ بال اچھی طرح اور جدید بنیادوں پر جاری ہے۔امام باڑہ کا اندرونی حصہ کافی دلفیریب اور خوبصورت طرز پر تعمیر کیا گیا ہے۔

صرف کچھ حصے کے نقاشی ابھی باقی ہے۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ سال1982ء میں اسلامی انقلاب کے رہبر معظم حضرت امام خامنہ ای بحثیت نمائندہ ولی فقیہ و بانی اسلامی جمہوریہ ایران حضرت امام خمینی ؒ کشمیر کے دورہ کے دوران امام باڑہ میں ایک تاریخی خطاب فرمائے اوراس کے علاوہ کئی نامور و معروف شخصیات نے امام باڑہ بڈگام میں خصوصی خطبات واعظ فرمائے ہے۔

نقش

مختصر معلومات

بڈگام
-----------------------------